اے کریم بنِ کریم اے رہنما اے مقتدا      اخترِ برجِ سخاوت گوہرِ درجِ عطا
آستانے پہ ترے حاضر ہے یہ تیرا گدا              لاج رکھ لے دست و دامن کی مرے بہرِ خدا
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
شاہِ اقلیمِ ولایت سرورِ کیواں جناب ہے          تمہارے آستانے کی زمیں گردوں قباب
حسرتِ دل کی کشاکش سے ہیں لاکھوں اضطراب     التجا مقبول کیجے اپنے سائل کی شتاب
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
سالکِ راہِ خدا کو راہنما ہے تیری ذات          مسلکِ عرفانِ حق ہے پیشوا ہے تیری ذات
بے نوایانِ جہاں کا آسرا ہے تیری ذات        تشنہ کاموں کے لیے بحر عطا ہے تیری ذات
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ہر طرف سے فوجِ غم کی ہے چڑھائی الغیاث          کرتی ہے پامال یہ بے دست و پائی الغیاث
پھر گئی ہے شکل قسمت سب خدائی الغیاث        اے مرے فریادرس تیری دہائی الغیاث
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
منکشف کس پر نہیں شانِ معلی کا عروج          آفتابِ حق نما ہو تم کو ہے زیبا عروج
میں حضیضِ غم میں ہوں اِمداد ہو شاہا عروج       ہر ترقی پر ترقی ہو بڑھے دونا عروج
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
تا کجا ہو پائمالِ لشکرِ اَفکارِ روح          تابکے ترساں رہے بے مونس و غمخوار روح
ہو چلی ہے کاوشِ غم سے نہایت زار روح       طالبِ اِمداد ہے ہر وقت اے دلدار روح
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
دبدبہ میں ہے فلک شوکت ترا اے ماہِ کاخ        دیکھتے ہیں ٹوپیاں تھامے گدا و شاہ کاخ
قصر جنت سے فزوں رکھتا ہے عزو و جاہ کاخ          اب دکھا دے دیدۂ مشتاق کو للہ کاخ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
توبہ سائل اور تیرے در سے پلٹے نامراد         ہم نے کیا دیکھے نہیں غمگین آتے جاتے شاد
آستانے کے گدا ہیں قیصر و کسریٰ قباد          ہو کبھی لطف و کرم سے بندۂ مضطر بھی یاد
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
نفس امارہ کے پھندے میں پھنسا ہوں العیاذ        در ترا بیکس پنہ کوچہ ترا عالم ملاذ
رحم فرما یا ملاذی لطف فرما یا ملاذ            حاضرِ در ہے غلامِ آستاں بہرِ لواذ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
شہرِ یار اے ذی وقار اے باغِ عالم کی بہار      بحر احساں رشخۂ نیسانِ جودِ کردگار
ہوں خزانِ غم کے ہاتھوں پائمالی سے دوچار        عرض کرتا ہوں ترے در پر بچشمِ اشکبار
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
برسرِ پرخاش ہے مجھ سے عدوے بے تمیز          رات دن ہے در پئے قلبِ حزیں نفسِ رجیز
مبتلا ہے سو بلاؤں میں مری جانِ عزیز       حلِ مشکل آپ کے آگے نہیں دشوار چیز
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
اک جہاں سیرابِ اَبرِ فیض ہے اب کی برس     تر نوا ہیں بلبلیں پڑتا ہے گوشِ گل میں رس
ہے یہاں کشتِ تمنا خشک و زندانِ قفس          اے سحابِ رحمتِ حق سوکھے دھانوں پر برس
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
فصلِ گل آئی عروسانِ چمن ہیں سبز پوش       شادمانی کا نواںسنجانِ گلشن میں ہے جوش
جوبنوں پر آ گیا حسنِ بہارِ گل فروش           ہائے یہ رنگ اور ہیں یوں دام میںگم کردہ ہوش
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
دیکھ کر اس نفسِ بد خصلت کے یہ زشتی خواص         سوزِ غم سے دل پگھلتا ہے مرا شکلِ رصاص
کس سے مانگوں خونِ حسرت ہاے کشتہ کا قصاص         مجھ کو اس موذی کے چنگل سے عطا کیجے خلاص
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ایک تو ناخن بدل ہے شدتِ افکار قرض       اس پر اَعدا نے نشانہ کر لیا ہے مجھ کو فرض
فرض اَدا ہو یا نہ ہو لیکن مرا آزار فرض       رد نہ فرمائو خدا کے واسطے سائل کی عرض
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
نفس شیطاں میں بڑھے ہیں سو طرح کے اختلاط         ہر قدم در پیش ہے مجھ کو طریقِ پل صراط
بھولی بھولی سے کبھی یاد آتی ہے شکل نشاط       پیش بارِ کوہِ کاہِ ناتواں کی کیا بساط
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
آفتوں میں پھنس گیا ہے بندۂ دارالحفیظ       جان سے سو کاہشوں میں دم ہے مضطر الحفیظ
ایک قلبِ ناتواں ہے لاکھ نشتر الحفیظ      المدد اے داد رس اے بندہ پرور الحفیظ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
صبح صادق کا کنارِ آسماں سے ہے طلوع       ڈھل چکا ہے صورتِ شب حسنِ رخسارِ شموع
طائروں نے آشیانوں میں کیے نغمے شروع          اور نہیں آنکھوں کو اب تک خوابِ غفلت سے رجوع
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
بدلیاں چھائیں ہوا بدلی ہوئے شاداب باغ          غنچے چٹکے پھول مہکے بس گیا دل کا دماغ
آہ اے جورِ قفس دل ہے کہ محرومی کا داغ           واہ اے لطفِ صبا گل ہے تمنا کا چراغ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
آسماں ہے قوس فکریں تیر میرا دل ہدف         نفس و شیطاں ہر گھڑی کف برلب و خنجر بکف
منتظر ہوں میں کہ اب آئی صداے لا تخف        سرورِ دیں کا تصدق بحر سلطانِ نجف
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
بڑھ چلا ہے آج کل اَحباب میں جوشِ نفاق      خوش مذاقانِ زمانہ ہو چلے ہیں بد مذاق
سیکڑوں پردوں میں پوشیدہ ہے حسنِ اتفاق      برسر پیکار ہیں آگے جو تھے اہلِ وفاق
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ڈر درندوں کا اندھیری رات صحرا ہولناک        راہ نامعلوم رعشہ پائوں میں لاکھوں مغاک
دیکھ کر ابرِ سیہ کو دل ہوا جاتا ہے چاک       آئیے اِمداد کو ورنہ میں ہوتا ہوں ہلاک
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ایک عالم پر نہیں رہتا کبھی عالم کا حال        ہر کمالے را زوال و ہر زوالے را کمال
بڑھ چکیں شب ہاے فرقت اب تو ہو روزِ وصال       مہرادھرمنہ کر کہ میرے دن پھریں دل ہو نہال
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
گو چڑھائی کر رہے ہیں مجھ پہ اندوہ و اَلم       گو پیاپے ہو رہے ہیں اہلِ عالم کے ستم
پر کہیں چھٹتا ہے تیرا آستاں تیرے قدم        چارۂ دردِ دلِ مضطر کریں تیرے کرم
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ہر کمر بستہ عداوت پر بہت اہلِ زمن       ایک جانِ ناتواں لاکھوں الم لاکھوں محن
سن لے فریادِ حسن فرما دے اِمدادِ حسن        صبحِ محشر تک رہے آباد تیری انجمن
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
ہے ترے الطاف کا چرچا جہاں میں چار سو        شہرۂ آفاق ہیں یہ خصلتیں یہ نیک خو
ہے گدا کا حال تجھ پر آشکارا مو بمو           آجکل گھیرے ہوئے ہیں چار جانب سے عدو
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
شام ہے نزدیک منزل دور میں گم کردہ راہ           ہر قدم پر پڑتے ہیں اس دشت میں خس پوش جاہ
کوئی ساتھی ہے نہ رہبر جس سے حاصل ہو پناہ       اشک آنکھوں میں قلق دل میں لبوں پر آہ آہ
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من
تاج والوں کو مبارک تاجِ زر تختِ شہی         بادشا لاکھوں ہوئے کس پر پھلی کس کی رہی
میں گدا ٹھہروں ترا میری اسی میں ہے بہی       ظلِ دامن خاک در دیہیم و افسر ہے یہی
روے رحمت برمتاب اے کامِ جاں از روے من
حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر کن سوے من

یقیناً مخزنِ صِدق و وفا صِدِّیق اکبر ہیں

 

نِہایَت مُتَّقی و پارسا صِدِّیقِ اکبر ہیں

تَقی ہیں بلکہ شاہِ اَتْقِیا صِدِّیق اکبر ہیں

 

جو یارِ غارِ مَحْبوبِ خدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

وُہی یارِ مزار ِمصطَفیٰ صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

طبیبِ ہر مریضِ لادوا صِدِّیق اکبر ہیں

غریبوں بے کسوں کا آسرا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

امیرُ الْمؤمنیں ہیں آپ امامُ الْمسلمین ہیں آپ

نبی نے جنّتی جن کو کہا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

سبھی اَصحاب سے بڑھ کر مقرَّب ذات ہے انکی

رفیقِ سرور ِاَرض و سماء صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

عمر سے بھی وہ افضل ہیں وہ عثماں سے بھی اعلیٰ ہیں

یقیناً پیشوائے مُرْتَضیٰ صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

امامِ احمد و مالِک، امامِ بُو حنیفہ اور

امامِ شافِعی کے پیشوا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

تمامی اولیاءُ اللہ کے سردار ہیں جو اُس

ہمارے غوث کے بھی پیشوا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

سبھی عُلَمائے اُمَّت کے، امام و پیشوا ہیں آپ

بِلا شک پیشوائے اَصفیا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

خدائے پاک کی رَحْمت سے انسانوں میں ہر اک سے

فُزوں تر بعد از گُل اَنْبِیا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

ہلاکت خیز طُغیانی ہو یا ہوں موجیں طوفانی

کیوں ڈوبے اپنا بَیڑا ناخدا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

بھٹک سکتےنہیں ہم اپنی منزِل ٹھوکر وں میں ہے

نبی کا ہے کرم اور رہنما صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

گناہوں کے مَرض نے نیم جاں ہے کر دیا مجھ کو

طبیب اب بس مِرے تو آپ یا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

نہ گھبراؤ گنہگار وتمھارے حَشْر میں حامی

مُحبِّ شافِعِ روزِ جزا صِدِّیقِ اکبر ہیں

 

نہ ڈر عطّؔارآفت سے خدا کی خاص رَحْمت سے

نبی والی تِرے، مُشْکِل کُشاصِدِّیقِ اکبر ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.