حقیقی محبت

از:- امام احمد بن محمد قسطلانی رضی المولیٰ عنہ
 وہ آیات جن میں اللّٰہ تعالٰی نے خود نبی اکرم صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم کے دشمنوں کا رد کرکے آپ کی شان کو بلند فرمایا۔
ارشادِ خدا وندی ہے:
ن ۚ وَالْقَلَمِ وَمَا يَسْطُرُونَ۰ مَا أَنتَ بِنِعْمَةِ رَبِّكَ بِمَجْنُونٍ۰
قلم اور ان کے لکھے کی قسم تم اپنے رب کے فضل سے مجنون نہیں۔
اللہ تعالٰی نے یہ بات اس وقت ارشاد فرمائی جب مشرکین نے کہا:
يٰۤاَيُّهَا الَّذِىۡ نُزِّلَ عَلَيۡهِ الذِّكۡرُ اِنَّكَ لَمَجۡنُوۡنٌؕ‏
اے وہ جن پر قرآن اترا بےشک تم مجنون نہیں۔
اللہ تعالٰی نے بذات خود کسی واسطہ کے بغیر آپ کے دشمنوں کو جواب دیا اور دوستوں کا طریقہ یہی ہوتا ہے کیونکہ جب کوئی محب کسی سے سنتا ہے کہ وہ اس کے محبوب کو گالی دیا ہے تو وہ خود اس کی مدد کرتے ہوئے جواب دیتا ہے یہاں بھی اللّٰہ تعالٰی نے آپ کا مددگار بنتے ہوئے بذات خود جواب دیا کیونکہ اللّٰہ تعالٰی کی مدد زیادہ کامل اور آپ کے مقام کو زیادہ بلند کرنے والی ہے اور اللّٰہ تعالٰی کا رد کرنا آپ کے خود رد کرنے کے مقابلے میں زیادہ پنچہنے والا ہے اور آپ کی بزرگی کے دیوان میں زیادہ ثابت اور قائم ہونے والا ہے
تو اللّٰہ تعالٰی نے اپنی بڑی بڑی نشانیوں کی قسم کھاتے ہوئے اپنے رسول اپنے حبیب اور اپنے خلیل کی پاکیزگی بیان کرکے دشمنوں نے جو بہتان باندھا تھا اس کو جھوٹ قرار دیا۔ ارشاد فرمایا:
 مَاۤ اَنۡتَ بِـنِعۡمَةِ رَبِّكَ بِمَجۡنُوۡنٍ‌ۚ‏ ۰
تم اپنے رب کے فضل سے مجنون نہیں۔
اور عنقریب آپ کے وہ دشمن جو آپ کو جھٹلا تے ہیں انہیں معلوم ہو جائےگا کہ فتنے میں کون مبتلا ہے نبی اکرم صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم یا وہ لوگ؟ ان لوگوں اور دوسرے عقلمند لوگوں کو یہ بات دنیا ہی میں معلوم ہوگئ اور عالم برزخ میں ان کا علم بڑھ جائےگا اور آخرت میں مکمّل طور پر ظاہر ہو جائےگا حتٰی کہ اس بات کے علم میں سب لوگ برابر ہوں گے اور ارشاد خداوندی ہے:
 وَ مَا صَاحِبُكُمۡ بِمَجۡنُوۡنٍ‌ۚ‏ ۰
اور تمہارے صاحب مجنون نہیں۔
جب عاص بن وائل سہمی نے نبی اکرم صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم کو دیکھا کہ آپ مسجد سے باہر تشریف لا رہے ہیں اور وہ داخل ہو رہا تھا باب بنو سہم کے پاس دونوں کی ملاقات ہوئی اور گفتگو بھی کی قریش کے سردار مسجد میں بیٹھے دیکھ رہے تھے عاص اندر داخل ہوا تو انہوں نے پوچھا تم کس آدمی سے باتیں کر رہے تھے؟ اس نے کہا اس ابتر (جس کی نسل باقی نہ رہی) سے (معاذ اللّٰہ)۔
حضور علیہ السلام کے بارے میں کہا اور نبی اکرم صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم کے صاحبزادے جو حضرت خدیجہ رضی اللّٰہ تعالٰی عنہا سے تھے انتقال کر گئے تھے۔ اس پر اللّٰہ تعالٰی نے خود جواب دیتے ہوئے فرمایا۔
 اِنَّ شَانِئَكَ هُوَ الۡاَبۡتَرُ۰
بےشک جو تمہارا دشمن ہے وہی ہر خیر سے محروم ہے۔
یعنی آپ کے دشمن اور آپ سے بغض رکھنے والے ہی ذلیل و حقیر ہے۔
جب مشرکین نے کہا:
  اَ فۡتَـرٰى عَلَى اللّٰهِ كَذِب۰
کیا اللّٰہ تعالٰی پر اس نے جھوٹ باندھا۔
تو اللّٰہ تعالٰی نے فرمایا:
بَلِ الَّذِيۡنَ لَا يُؤۡمِنُوۡنَ بِالۡاٰخِرَةِ فِى الۡعَذَابِ وَالضَّلٰلِ الۡبَعِيۡدِ۰
بلکہ وہ لوگ جو آخرت پر ایمان نہیں رکھتے وہ
عذاب اور دور کی گمراہی میں ہیں۔
اور جب انہوں نے کہا:
لَسۡتَ مُرۡسَلًا‌۰
آپ رسول نہیں ہیں۔
تو اللّٰہ تعالٰی نے آپ کی طرف سے جواب دیتے ہوئے فرمایا:
يٰسٓ ۚ‏ ۰وَالۡقُرۡاٰنِ الۡحَكِيۡمِ۰اِنَّكَ لَمِنَ الۡمُرۡسَلِيۡنَۙ‏۰
حکمت والے قرآن کی قسم! بےشک آپ مرسلین میں سے ہیں۔
اور جب انہوں نے کہا:
اَٮِٕنَّا لَتٰرِكُوۡۤا اٰلِهَـتِنَا لِشَاعِرٍ مَّجۡـنُوۡنٍ ؕ‏ ۰
کیا ہم اپنے معبودوں کو ایک شاعر مجنون کی وجہ سے چھوڑ دیں؟
اللّٰہ تعالٰی نے ان کا رد کرتے ہوئے فرمایا:
  بَلۡ جَآءَ بِالۡحَقِّ وَصَدَّقَ الۡمُرۡسَلِيۡنَ‏۰
بلکہ آپ حق لے کر آئے اور آپ نے رسولوں کی تصدیق کی۔
تو اللّٰہ تعالٰی نے آپ کی تصدیق فرمائی۔
پھر آپ کے دشمن کے لئے عذاب کا ذکر کیا:
  اِنَّكُمۡ لَذَآٮِٕقُوا الۡعَذَابِ الۡاَلِيۡمِ‌ۚ۰
بےشک تم درد ناک عذاب چکھنے والے ہو۔
اور جب انہوں نے کہا:
اَمۡ يَقُوۡلُوۡنَ شَاعِرٌ نَّتَـرَبَّصُ بِهٖ رَيۡبَ الۡمَنُوۡنِ‏۰
یا کہتے ہیں یہ شاعر ہیں ہمیں ان پر حوادث زمانہ کا انتظار ہے۔
تو اللّٰہ تعالٰی نے ان کا رد کرتے ہوئے فرمایا:
وَمَا عَلَّمۡنٰهُ الشِّعۡرَ وَمَا يَنۡۢبَغِىۡ لَهٗؕ اِنۡ هُوَ اِلَّا ذِكۡرٌ وَّقُرۡاٰنٌ مُّبِيۡنٌۙ۰
اور ہم نے ان کو شعر نہیں سکھائے اور نہ ہی یہ ان کے شایانِ شان ہیں یہ تو ذکر اور واضح قرآن ہے۔
اور جب اللّٰہ تعالٰی نے ان مشرکین کا یہ قول ذکر کیا:
اِنۡ هٰذَاۤ اِلَّاۤ اِفۡكٌ اۨفۡتَـرٰٮهُ وَاَعَانَهٗ عَلَيۡهِ قَوۡمٌ اٰخَرُوۡنَ‌‌ ۛۚ ۰
یہ تو نہیں مگر ایک بہتان جو انہوں نے بنا لیا ہے اور اس پر اور لوگوں نے مدد دی۔
تو اللّٰہ تعالٰی نے ان کا نام کاذبین(جھوٹ بولنے والے) رکھا ارشاد فرمایا:
فَقَدۡ جَآءُوۡ ظُلۡمًا وَّزُوۡرًا ۛۚ‏ ۰
بےشک وہ ظلم اور جھوٹ پر آئے۔
اور فرمایا:
قُلۡ اَنۡزَلَهُ الَّذِىۡ يَعۡلَمُ السِّرَّ فِى السَّمٰوٰتِ وَالۡاَرۡضِ‌ؕ
تم فرماؤ اسے تو اس نے اتارا ہے جو آسمانوں اور زمین کی ہر بات جانتا ہے۔
اور جب انہوں نے کہا کہ اس قرآن کو ان کی طرف شیطان القاء کرتا ہے تو اللّٰہ تعالٰی نے ان کا رد کرتے ہوئے فرمایا:
  وَمَا تَنَزَّلَتۡ بِهِ الشَّيٰطِيۡنُ‏ ۰
اور اس قرآن کو لےکر شیطان نہ اترے۔
اور جب ان پر پہلے لوگوں کی خبر پڑهی تو نضر بن حارث نے کہا:
لَوۡ نَشَآءُ لَـقُلۡنَا مِثۡلَ هٰذَٓا‌ ۙ اِنۡ هٰذَاۤ اِلَّاۤ اَسَاطِيۡرُ الۡاَوَّلِيۡنَ۰
اگر ہم چاہتے تو ایسے ہم بھی کہہ دیتے یہ تو نہیں مگر اگلوں کے قصے۔
تو اللّٰہ تعالٰی نے ان کو جھٹلا تے ہوئے فرمایا:
قُلْ لَّٮِٕنِ اجۡتَمَعَتِ الۡاِنۡسُ وَالۡجِنُّ عَلٰٓى اَنۡ يَّاۡتُوۡا بِمِثۡلِ هٰذَا الۡقُرۡاٰنِ لَا يَاۡتُوۡنَ بِمِثۡلِهٖ۰
تم فرماؤ اگر آدمی اور جن سب اس بات پر متفق ہو جائیں کہ اس قرآن کی مانند لے آئیں تو اس کا مثل نہ لا سکیں۔
اور جب ولید بن مغیرہ نے کہا:
فَقَالَ اِنۡ هٰذَاۤ اِلَّا سِحۡرٌ يُّؤۡثَرُۙ‏۰اِنۡ هٰذَاۤ اِلَّا قَوۡلُ الۡبَشَرِؕ‏۰
یہ تو وہی جادو ہے اگلوں سے سیکھا یہ نہیں مگر آدمی کا کلام۔
تو اللّٰہ تعالٰی نے فرمایا:
كَذٰلِكَ مَاۤ اَتَى الَّذِيۡنَ مِنۡ قَبۡلِهِمۡ مِّنۡ رَّسُوۡلٍ اِلَّا قَالُوۡا سَاحِرٌ اَوۡ مَجۡنُوۡنٌ‌ۚ‏۰
یونہی جب ان سے اگلوں کے پاس کوئی رسول تشریف لایا تو یہی بولے کہ جادوگر ہے یا دیوانہ۔
 تو یوں نبی اکرم صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم کو تسلی دی۔
اور جب مشرکین نے کہا حضرت محمد صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم کو ان کے رب نے چھوڑ دیا ہے تو اللّٰہ تعالٰی نے ان کے رد میں فرمایا:
  مَا وَدَّعَكَ رَبُّكَ وَمَا قَلٰىؕ‏۰
تمہیں تمہارے رب نے نہ چھوڑا اور نہ مکروہ جانا۔
اور جب انہوں نے کہا:
مَالِ هٰذَا الرَّسُوۡلِ يَاۡكُلُ الطَّعَامَ وَيَمۡشِىۡ فِى الۡاَسۡوَاقِ‌۰
اور رسول کو کیا ہوا کھانا کھاتا ہے اور بازاروں میں چلتا ہے؟
تو اللّٰہ تعالٰی نے فرمایا:
  وَمَاۤ اَرۡسَلۡنَا قَبۡلَكَ مِنَ الۡمُرۡسَلِيۡنَ اِلَّاۤ اِنَّهُمۡ لَيَاۡكُلُوۡنَ الطَّعَامَ وَيَمۡشُوۡنَ فِى الۡاَسۡوَاقِ‌ ؕ ۰
اور ہم نے تم سے پہلے جتنے رسول بھیجے سب ایسے ہی کھانا کھا تے اور بازاروں میں چلتے۔
اور جب اللّٰہ تعالٰی کے دشمنوں یہودیوں نے نبی اکرم صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم سے نکاح اور ازواج مطہرات کی کثرت پر حسد کیا اور کہا کہ آپ کا کام تو صرف نکاح کرنا ہے تو اللّٰہ تعالٰی نے اپنے رسول صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم کی طرف سے اور آپ کی دفاع میں ان کا رد کرتے ہوئے فرمایا:
اَمۡ يَحۡسُدُوۡنَ النَّاسَ عَلٰى مَاۤ اٰتٰٮهُمُ اللّٰهُ مِنۡ فَضۡلِهٖ‌ۚ فَقَدۡ اٰتَيۡنَاۤ اٰلَ اِبۡرٰهِيۡمَ الۡـكِتٰبَ وَالۡحِكۡمَةَ وَاٰتَيۡنٰهُمۡ مُّلۡكًا عَظِيۡمًا
یا لوگوں سے حسد کرتے ہیں اس پر جو اللّٰہ نے انہیں اپنے فضل سے دیا تو ہم نے تو ابراہیم کی اولاد کو کتاب اور حکمت عطا فرمائی اور انہیں بڑا ملک دیا۔
اور جب انہوں نے اس بات کو(عقل سے) بعید سمجھا کہ اللّٰہ تعالٰی کسی انسان کو رسول بنا کر بھیجے تو اللّٰہ تعالٰی نے ان کا یہ قول نقل کرتے ہوئے فرمایا:
وَمَا مَنَعَ النَّاسَ اَنۡ يُّؤۡمِنُوۡۤا اِذۡ جَآءَهُمُ الۡهُدٰٓى اِلَّاۤ اَنۡ قَالُـوۡۤا اَبَعَثَ اللّٰهُ بَشَرًا رَّسُوۡلًا۰
اور کس بات نے لوگوں کو ایمان لانے سے روکا جب ان کے پاس ہدایت آئی مگر اسی نے کہ بولے کیا اللّٰہ تعالٰی نے آدمی کو رسول بنا کر بھیجا ہے؟
اور وہ اس بات سے جاہل تھے کہ ہم جنس ہونا انس پیدا کرتا ہے اور مخالف جنس سے مخالفت پیدا ہوتی ہے اللّٰہ تعالٰی نے ان کو جواب دیتے ہوئے فرمایا:
قُلْ لَّوۡ كَانَ فِى الۡاَرۡضِ مَلٰۤٮِٕكَةٌ يَّمۡشُوۡنَ مُطۡمَٮِٕنِّيۡنَ لَـنَزَّلۡنَا عَلَيۡهِمۡ مِّنَ السَّمَآءِ مَلَـكًا رَّسُوۡلًا۰
تم فرماؤ اگر زمین میں فرشتے ہوتے چین سے چلتے تو ان پر آسمان سے ہم رسول بھی فرشتہ اتارتے۔
یعنی اگر یہ لوگ فرشتے ہوتے تو ضروری ہوتا کہ ان کا رسول بھی فرشتوں سے ہو لیکن جب اہل زمین انسان ہیں تو واجب ہے کہ ان کا رسول بھی بشر ہو۔
تو یہ نبی اکرم صلی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلم کا کتنا بڑا اعزاز ہے حالانکہ پہلے انبیاء کرام علیہم السلام اپنا دفاع خود کرتے اور دشمنوں کو جواب دیتے تھے جس طرح حضرت نوح علیہ السلام نے فرمایا:
يٰقَوۡمِ لَـيۡسَ بِىۡ ضَلٰلَةٌ۰
اے میری قوم مجھ میں گمراہی کچھ نہیں۔
اور حضرت ہود علیہ السلام نے فرمایا:
لَـيۡسَ بِىۡ سَفَاهَةٌ۰
اے میری قوم مجھے بیوقوفی سے کیا تعلق ۔
اور اس طرح کی کئی مثالیں ہیں۔
(المواہب الدنیہ ، جلد ٢، صفحہ ٦٢٥)
(ماخوذ از ماہنامہ حشمت ضیا، جولائی ٢٠٢١)
مختلف مذاہب اور مدعی اسلام فرقوں کے ساتھ اتحاد
از :- حجۃالاسلام علامہ حامد رضا خان علیہ الرحمہ
اب یہ مسئلہ اور غور طلب ہے کہ جو فرقے باطل اور اہلِ ہوا ہیں، بعض ان میں سے گمراہ ہیں بعض مرتد جو کفر کی سرحد میں داخل ہو چکے ہیں ان فرقوں کے ساتھ اتحاد کیا جائے یا نہ کیا جائے، لوگ کہتے ہیں کہ ضرورت کا وقت ہے ، کفار کا مقابلہ ہے ، آپس کی مخالفتوں پر نظر نہ کرنا چاہیے۔ دراصل یہ بہت بڑی غلطی ہے اور حامیان اتفاق ہمیشہ اس کے مرتکب رہے ہیں اور اسی وجہ سے انھیں کبھی اپنے مقصد میں کامیابی نہ ہو سکی۔
شیعہ باہم متفق ہو جاتے ہیں اور ان کی آل انڈیا کانفرنسیں کام کرتی ہیں اور وہ اپنا شیرازہ درست کر لیتے ہیں اور اس وقت سنی یا کسی اور فرقہ کی طرف نظر بھی نہیں کرتے ، غیر مقلد متحد ہوتے ہیں ان کی آل انڈیا اہلِ حدیث کانفرنسیں قائم ہوتی ہیں وہ آپس میں نظم وارتباط کے رشتے مضبوط کرتے ہیں اور دوسرے کسی گروہ کی پرواہ بھی نہیں کرتے ،دیوبندی، وہابی اپنی جماعتیں بنا کر اپنا کام کرتے ہیں ۔ قادیانی باہم متحد ہو کر ایک مرکز پر مجتمع رہتے ہیں ، یہ سب اپنے کام میں چست اور اپنے نظام کو استوار کرنے میں مصروف رہتے ہیں اور اپنے پاؤں پر کھڑے ہوتے ہیں کسی کا سہارا نہیں تکتے۔ ہمارے سنی جو بفضلہ تعالی تعداد میں تمام فرقوں کے مجموعہ سے قریب قریب آٹھ گنے زیادہ ہیں ، نہ ان میں نظم ہے نہ ارتباط ، نہ کبھی کوئی آل انڈیا کانفرنس قائم ہوئی نہ اپنی شیرازہ بندی کا خیال آیا۔ انھیں اپنے پاؤں پر کھڑے ہونے کی ہمت ہی نہیں اگر کبھی اپنی درستی کا خیال آیا تو اس سے پہلے اغیار پر نظر گئی اور یہ سمجھا کہ وہ شامل نہ ہوئے تو ہم کچھ نہ کر سکیں گے، باوجود یہ کہ اگر صرف یہی باہم متحد ہو جائیں اور چھ کروڑ کی جماعت میں نظم قائم ہو تو انھیں ان کی کوئی حاجت ہی نہیں بلکہ اس وقت ان کی شوکت دوسرے فرقوں کو ان کی طرف مائل ہونے پر مجبور کرے گی اور یہ اختلافات کی مصیبت سے بچ کر اپنے اتحاد و انتظام میں کامیاب ہو سکیں گے، لیکن افسوس تمام چھوٹے چھوٹے قلیل التعداد فرقوں نے اپنے اپنے حدود محفوظ کر لیے اور اپنی شیرازہ بندی و اجتماع سے دنیا میں اپنی ہستی اور زندگی کا ثبوت دے دیا۔
غیر ممالک میں ان کی آوازیں پہونچنے لگیں مگر ہمارے سنی حضرات کے دل میں کبھی اتفاق کی امنگیں پیدا ہوئیں تو انھیں اپنوں سے پہلے مخالف یاد آئے جو رات دن اسلام کی بیخ کنی کے لیے بے چین ہیں اور سنیوں کی جماعت پر طرح طرح کے حملے کر کے اپنی تعداد بڑھانے کے لیے مضطر اور مجبور ہیں۔ ہمارے برادران کی اس روش نے اتحاد و اتفاق کی تحریک کو بھی کامیاب نہ ہونے دیا، کیوں کہ اگر وہ فرقے اپنے دلوں میں اتنی گنجائش رکھتے کہ سنیوں سے مل سکیں تو علاحدہ دیڑھ اینٹ کی تعمیر کر کے نیا فرقہ ہی کیوں بناتے اور مسلمانوں کے خلاف ایک جماعت کیوں بناتے وہ تو حقیقتا مل ہی نہیں سکتے۔ اور صورۃ مل بھی جائیں تو ملنا کسی مطلب سے ہوتا ہے جس کے حصول کے لیے ہر دم تیش زنی جاری رہتی ہے اور اس کا انجام جدال و فساد ہی نکلتا ہے۔
یہ تو تازہ تجربہ ہے کہ خلافت کمیٹی کے ساتھ ایک جماعت جمعیتہ العلما کے نام سے شامل ہوئی جس میں تقریبا سب کے سب یا بہت زیادہ وہابی اور غیر مقلد ہیں نادر ہی کوئی دوسرا شخص ہو تو ہو، اس جماعت نے خلافت کی تائید کو تو عنوان بنایا ،عوام کے سامنے نمائش کے لیے تو یہ مقصد پیش کیا ، مگر اہل سنت کے رد اور ان کی بیخ کنی کا انجام دیا، اپنے مذہب کی ترویج اس پردہ میں خوب کی، میرے پاس جناب مولوی احمد مختار صاحب صدرِ جمعیتہ العلما صوبہ بمبئی کا ایک خط آیا جو انھوں نے مدارس کا دورہ کرتے ہوئے تحریر فرمایا ہے ، اس میں لکھتے ہیں کہ وہابی اس صوبہ میں اس قومی روپیہ سے جو ترکوں کے درد ناک حالات بیان کرکے وصول کیا گیا تھا، اب تک دو لاکھ تقویۃ الایمان چھپا کر مفت تقسیم کر چکے ہیں۔ اب بتائیے کہ ان جماعتوں کا ملانا زر دادن درد سر خریدن ہوا یا نہیں، اپنے ہی روپے سے اپنے ہی مذہب کا نقصان ہوا۔
الغرض : دوسرے فرقے ہم سے کسی طرح نہیں مل سکتے، ملیں تو دھوکا ہے، جس سے ہمیں اور ہمارے مذہب کو سخت مضرت و نقصان پہنچتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ کتنا بڑا نقصان ہے کہ ان کی بدولت کروڑوں سنی چھوٹ جاتے ہیں جو ان کے شامل ہونے کی وجہ سے علاحدہ رہتے ہیں ، مگر اب تک یہی رہا کہ سنیوں کی کثیر تعداد کو چھوڑا گیا اور ان مختلف فرقوں کے ملانے کی کوشش کی گئی جس میں مختلف قسم کے درندے ہیں کہ ان کے جمع کرنے سے بجز فتنہ و فساد کے کچھ حاصل نہیں ، اتفاق کی کوششوں میں ناکامی کا اصل راز یہی ہے اور اسی وجہ سے حامیانِ اتحاد سات کروڑ مسلمانوں کے اجتماع سے اب تک محروم رہے۔ شریعتِ طاہرہ نے ان گمراہ فرقوں کے ساتھ اتحاد کی اجازت نہیں دی بلکہ ان سے جدا رہنے اور اجتناب کرنے کا حکم دیا۔
حدیث شریف میں ہے : قال النبی صلی الله علیہ وسلم : من وقر صاحب بدعة فقد اعان علی ھدم الاسلام ۔
جو مبتدع کی توقیر کرے وہ اسلام کے ڈھانے میں مدد کرتا ہے۔
دوسری حدیث شریف : لا تجالسوھم ولا تشاربوھم ولا تواکلوھم۔
ان کے ساتھ مجالست و ہم نشینی نہ کرو نہ ان کے ساتھ مواکلت و مشاربت کھانا پینا کرو
۔اور ایک حدیث پاک میں ہے :من جاھدھم بیدہ فھو مومن و من جاھد بلسانہ فھو مومن و من جاھد فی قلبه فھو مومن ولیس وراء ذلك من الایمان حبة خردل۔
جس نے ان سے اپنے ہاتھ سے جہاد کیا وہ مومن ہے اور جس نے اپنی زبان سے جہاد کیا وہ مومن ہے اور جس نے ان پر دل سے جہاد کیا وہ مومن ہے اور اس کے ماسوا رائی کے دانہ برابر ایمان نہیں۔
قرآن پاک میں ارشاد فرماتا ہے : فلا تقعد بعد الذکری مع القوم الظالمین۔
یاد آنے پر ظالم قوم کے پاس مت بیٹھو۔
تفسیر احمدی میں ہے : ان القوم الظلمین یعم المبتدع والفاسق والفاجر والقعود مع کلھم ممتنع۔
کہ قوم ظالم بدعتی ، فاسق ، فاجر سب کو عام ہے اور سب کے ساتھ ہم نشینی ممنوع۔ علاوہ بریں صدہا نصوص سے بصراحت ثابت ہے کہ فرق ضالہ اور مبتدعہ کے ساتھ اتفاق و ارتباط ممنوع اور نا جائز ہے۔
حضور انور علیہ الصلاۃ والسلام کے پردہ فرمانے کا وقت ایسا نازک وقت تھا کہ پھر ایسا نازک وقت قیامت تک کبھی نہ آئے گا۔ خود حضور اقدس صلی الله علیہ وسلم کی مفارقت اتنا بڑا صدمہ تھا جس نے صحابہ میں تاب و تواں باقی نہ چھوڑی تھی، شب و روز رونا اور بے قرار رہنا ان کا معمول تھا، ابتلائے غم کی یہ کیفیت کہ رفقاء سامنے آئیں سلام کریں اور انہیں مطلق خبر نہ ہو، ادھر دشمنان اسلام نے سمجھ لیا کہ اب وقت ہے اور وہ تیغ و سنان سنبھال کر تیار ہو گئے ۔ دنیا کے تمام کفار اسلام کے ساتھ عداوت کی موجیں مارنے والا دل سینوں میں رکھتے تھے ، غیظ و غضب میں آپے سے باہر ہو گئے ، اس وقت ایک جماعت نے زکوۃ دینے سے انکار کر دیا۔ اسلام نو عمر ہے ، اس کے مربی پیشوا نے ابھی پردہ فرمایا ہے ، رفقا غم سے بے تاب ہیں، دشمن شمشیر بکف ہیں ، اس سے بڑھ کر اور کیا نازک وقت ہوگا، اس وقت صدیق اکبر رضی الله عنہ اس پالیسی پر عمل نہیں کرتے کہ سب کو ملا لیں یا غلط کاریوں پر صبر کر کے خاموش ہو جائیں اور دشمنوں کی قوت کے اندیشہ سے کسی سے کوئی باز پرس اور دار و گیر نہ کریں بلکہ پیغمبرِ اسلام صلی الله علیہ وسلم کا یہ پہلا جانشین اس حالت سے ذرا مرعوب نہیں ہوتا اور نہایت ہمت اور استقلال اور جرأت و شجاعت کے ساتھ اس قوم کے خلاف جہاد و قتال کا اعلان فرما دیتا ہے جس نے زکاۃ دینے سے انکار کیا تھا، اس کا یہ اثر ہوتا ہے کہ صدیق اکبر رضی الله عنہ کو اس قوم پر غلبہ حاصل ہونے کے ساتھ ساتھ کفار پر بھی اقتدار حاصل ہوتا ہے اور خلیفۂ رسول کا یہ استقلال کفار کی ہمتیں توڑ دیتا ہے۔
آخر کار صحابہِ کرام کو تسلیم کرنا پڑتا ہے اور واقعات ثابت کرتے ہیں کہ خلیفہِ رسول صلی الله علیہ وسلم حق پر ہیں۔ تو آج مسلمان شریعت طاہرہ اور پیشوایان دین کا اتباع چھوڑ کر ان کے خلاف راہ چل کر کس طرح منزل مقصود تک پہنچ سکتے ہیں ، جس چیز کو شریعت نے نا جائز کر دیا اس سے کوئی فائدہ کیونکر مقصود ہو سکتا ہے اور کوئی موافق مدعا نتیجہ کیسے حاصل ہو سکتا ہے، لہذا اتفاق کی کوشش کے لیے ہمیں سب سے پہلے اس اصل اعظم کو اپنے پیش نظر رکھنا چاہیے کہ ہمیں اہل سنت کے ساتھ اتفاق کرنا اور انھیں ایک رشتہ میں مربوط کرکے ان کی منتشر قوت کو یکجا کرلینا ہے، یہی ہمیں مفید ہے اور خدا میسر کرے اور ہم اس مقصد میں کامیاب ہو جائیں تو آج سات کروڑ مسلمان کی کثیر تعداد ایک متحد قوت نظر آئے اور دوسرے چھوٹے چھوٹے فرقے اس کی شوکت و قوت دیکھ کر خود اس میں ملنے کی کوشش کریں اور ہماری اکثریت انہیں مفسدانہ خیالات سے باز آنے پر مجبور کر دے اور حقیقی اتحاد اور اس کے نفیس برکات دنیا کے قوموں کو نظر آجائیں۔
(خطبۂ صدارت، صفحہ ٤٧)
(ماخوذ از ماہنامہ حشمت ضیا)

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.