جوبنوں پر ہے بہارِ چمن آرائیِ دوست

جوبنوں پر ہے بہارِ چمن آرائیِ دوست جوبنوں پر ہے بہارِ چمن آرائیِ دوست خلد کا نام نہ لے بلبلِ شیدائیِ دوست تھک کے بیٹھے تو درِ دل پہ تمنّائیِ دوست کون سے گھر کا اُجالا نہیں زیبائیِ دوست عرصۂ حشر کجا موقفِ محمود کجا ساز ہنگاموں سے رکھتی نہیں یکتائیِ دوست مہر کس منھ …

جوبنوں پر ہے بہارِ چمن آرائیِ دوست Read More »