ہوا ہوں دادِ ستم کو میں حاضرِ دربار

ہوا ہوں دادِ ستم کو میں حاضرِ دربار   ہوا ہوں دادِ ستم کو میں حاضرِ دربار گواہ ہیں دلِ محزون و چشمِ دریا بار طرح طرح سے ستاتا ہے زمرۂ اشرار بدیع بہر خدا حرمتِ شہِ ابرار مدار چشمِ عنایت زمن دریغ مدار نگاہِ لطف و کرم از حسنؔ دریغ مدار اِدھر اقارب عقارب …

ہوا ہوں دادِ ستم کو میں حاضرِ دربار Read More »