میرا گھرغیرت خورشیدِ درخشاں ہوگا

میرا گھرغیرت خورشیدِ درخشاں ہوگا میرا گھر غیرت خورشیدِ درخشاں ہوگا خیر سے جان قمر جب کبھی مہماں ہوگا جو تبسم سے عیاں اک درِ دنداں ہوگا ذرہ ذرہ مرے گھر کا مہِ تاباں ہوگا کیوں مجھے خوف ہو محشر کا کہ ہاتھوں میں مرے دامن حامی خود، ماحی عصیاں ہوگا پلہ عصیاں کا گراں …

میرا گھرغیرت خورشیدِ درخشاں ہوگا Read More »